Sohni Urdu Digest

Urdu Romantic Novels, Novelettes, Short Stories for Online Reading and Download PDF eBooks

Beqarari Si Beqarari Hai

Beqarari Si Beqarari Hai is an Urdu Romantic Novel by Gohar Shahwar about a passionate young girl who wants to become Islamic fashion designer

Beqarari Si Beqarari Hai is an Urdu Romantic Novel by Gohar Shahwar about a passionate young girl who wants to become Islamic fashion designer,  Page No. 1

Sponsored Links

30 Comments

Add a Comment
  1. bht fazol hy tuba.dmag pak gya.hur mint bd new story start,250 page parhny k bd himt jawab dy gye.etne ache story thi.satya nas kr dia logo k 100 stories or es main dal k.hur mint bd new story,to the point to kuch hy he ne.

  2. aap ka andaaz likh nay ka bohoth khoobsurath hay …. magar aik novel may aap nay kayee kahaniyan shamil kerdi hain jis say asal kahani lugta hay in kay neechay dub si gayee hay … baherhaal shuroo may kahani behtareen ja rahi thi ….. magar end aik aam viewer kay liyai kafi confusing tha …. I hope kay aap ainda is baath ka qayal rakhingi …. shukriya and Jazak Allah Hu Khair

  3. Axhi thi novl bus end thora or sahi hona chae tha koi bt nhi ghohar shahwar apny iqra shagheer ahmad ki novl parhi hai kbhi unko read kry apko us sy b guide mily gi meri fvrt writr hai wo unka likhny ka andaz bhot psnd ha mujy

  4. Download kasy hoga

  5. Salam dear shehwar,
    Novel ap ne bohat acha likha is me koi shak Nahi. To be very honest with you end se Asia lag raha hai k kafi kuch miss ho geya. Abeer ki family k sath Kya hua? Abeer ki family ne usey marne k liye hospital me akale chord diya?
    Kashif ka kya Bana? Taimoor ko kase pata chala k mehak abeer hi hai? Pata chala b k Nahi? I think k jab fayqa taimoor ko milti hai use taimoor ko batana chihey tha k ye abeer hai. Wahan shayad kuch skip ho geya. Us k ilawa to taimoor k kiss janney wale ne abeer ko Nahi dekha tha so.
    Ye itne sawal b mind me is liye a rahe hain k ap ne ikhtatamiya se pehle tak puri story ko aise likha k koi Baat reh na jaye jase apko kahani khatum krne ki koi jaldi Nahi. Lakin end Aik page pe khatum wao I mean story me theek thak qisam ka depression tha me to dua mang rahi thi k happy ending ho. Ending happy to huyee but kuch kami reh gayee hai. Jitna story me stress tha end utan acha Nahi huya. Ye meri zati raye hai. Me apke reply ka wait karon gi.
    God bless you.

    1. گوہر شہوار

      وعلیکم السلام حنا: ناول کو پسند کرنے اور اس پر تنقید کرنے کا شکریہ۔ آپ کے بات ٹھیک ہے کہ اختتام تھوڑا غیر واضح تھا کافی چیزوں کے اشارے تو موجود تھے لیکن ان کی تفصیل نا ہونے کی وجہ سے کئی لوگوں نے تشنگی محسوس کی ہے۔ میں ان سب لوگوں کی دل آزادی ، تشنگی اور ڈیپریشن کے لیے معزرت خواہ ہوں۔
      دراصل ناول کو اس طرح ادھورا اور غیر واضح ختم کرنا بھی ایک خاص مقصد کے تحت تھا تاکہ ناول کی مین تھیم مزید واضح ہوسکے۔ ناول کی بنیادی تھیم میں ڈیپریشن اور دکھ بھی اسی لیے زیادہ ہے کہ یہ حقیقی زندگی کی عکاسی کرتا ہے۔ حقیقی زندگی میں بہت سی باتیں ان کہی، ان سنی اور غیر واضح رہ جاتی ہیں۔ اصل بات یہ ہے کہ ہم ان دکھوں اور تکلیفوں سے مطلب کیا لیتے ہیں۔ آیا ہم اوپر والے ہیں یا نیچے والے۔
      ویسے مجھے لگتا ہے کہ مجھے آپ کے سوالوں کے لیے ایک مکمل پارٹ لکھنا پڑے گا۔ مگر مختصر جواب تو میں دے دیتی ہوں۔ مزید تفصیل کے لیے آپ مجھے ای میل کرسکتی ہیں۔
      عبیر کو ہسپتال داخل کروانے کے بعد اس کی بہن اور ماں گھر جارہی تھیں کہ ائر پورٹ کے پاس ایک حادثے میں ان کا انتقال ہوگیا تھا۔اسی وجہ سے عبیر لاوارث رہ گئی۔
      کاشف کو بھی اتفاق سے کبھی حقیقت معلوم نہ ہوسکی۔ اس نے امریکہ جاکر امیرہ سے شادی کرلی
      فائقہ تیمور سے کافی ہاؤس کے دروازے پر ملی تھی اس لیے وہ عبیر کو نہ دیکھ سکی ورنہ ہیلو ہائے کرنے ضرور آتی
      تیمور کو بابا جی نے اپنے کشف سے بتادیا تھا کہ میک ہی عبیر ہے ۔
      عبیر کی ریکوری کے بعد اس کے زخم پھر تازہ ہوگئے جن پر تیمور نے ہی مرہم رکھا تھا۔
      تیمور کو عبیر کی ایمانی محبت ہی اللہ کی طرف لے کر آئی تھی جیسا کے بابا جی نے کہا تھا کہ کسی ایمان والی کی محبت ہی تمھیں انسانوں اور اللہ سے قریب لائے گی،۔

      1. salaam,

        thanks for your reply. I try to find out if you write any other novel but unfortunately no success. could you please send me the link or names of your other novel?
        extremely sorry if my words heart you that was not my attention. infect I told my hubby this is the third best novel that I red so far.
        wish you very best of luck for your future.

        1. گوہر شہوار

          Hina: So nice of you to appreciate and say such wonderful words. Nothing is more spirit raising for an author than these words. Your critique is much appreciate. I have not publish any other novel. I am writing two but they would take few months. I don’t want to hurry, i want to be loyal to art and truth. I hope you would enjoy my novels. Stay blessed

  6. Wonderful story. The philosophical touch about the existence of Allah, creation of universe, complex human psychology, pride in being so called pious and human emotions and feelings are described in marvellously persuasive style. Language is advocatively convincing to resolve the doubts specially about creation and continuation of the world’s mega phenomena ” Man”. Best of luck for future Shehwar.

    1. گوہر شہوار

      Shazia Nasreen: So nice of you to appreciate the underlying theme of the novel. Your encouragement is much appreciated

  7. Ajeeb bonga kisam ka end kia hay.

  8. Thats a really annoying and frustrating story iam so annoyed thats really annoying content iam depressed after reading it

  9. aap ke aur kon kon se novel plz naam lekay un ka

  10. buhat acha likha hay aap ne likhti raha karay

    1. گوہر شہوار

      Angel & Aksa Khan: Thanks.

  11. گوہر شہوار

    You can ask anything regarding the novel on following address
    Gohareshahwar07@gmail.com

    1. salam
      Apki dono novels me nafsiyati marz hai aisa kiun???

      1. گوہر شہوار

        مجھے نارمل لوگوں سے زیادہ ایبنارمل لوگوں میں زیادہ دلچسپی ہے۔ ان لوگوں کا زندگی کو دیکھنے اور گزارنے کا ڈھنگ نرالا ہوتا ہے۔ یہی لوگ حقیقت کے خلاف سوچتے اور اسے تبدیل کرکے نئی دنیا بنانے ہیں۔ سارے بڑے فلسفی، سائنسدان، شاعر، ادیب،حساب دان، اور مجزوب وغیرہ ایبنارمل ہی ہوتے ہیں۔

        انھی کے فیض سے بازار عقل روشن ہے
        جو گاہے گاہے جنوں اختیار کرتے رہے۔

        1. try to give short comments plz

  12. Bht achi h lekin dimagh ghuma diya is story ne.mujhe lg rha h k ma b aik nfsyati mareez hun.kya waqia he ye real story h.

    1. انیلا نواز، کہانی کو پسند کرنے کا شکریہ ،میں نے جن سے ادب سیکھا وہ کہا کرتی تھیں۔ کبھی شعرکی تشریح نہ کرو اور کہانی کی وضاحت نہ کرو۔ کہانی، شعر، پینٹنگ اور موسیقی کا حسن ہمارے دل کو چھوتا ہے اور ہمیں انسان ہونا سکھاتا ہے۔ان چیزوں کو صرف دل سے محسوس کرنا چاہیے۔ آپ کا دل خود اس کے پیچھے کی آفاقی سچائی کی گواہی دے گا

      1. Gohar shahwar ap bht achi writer hain ap ka likhny ka andaz bht acha lga.
        Main b writer bnna chahti hu.mere pas ideas to bht hoty hain lekin likhny k baad lgta hai k kuch kami reh gai hai.main ne short stories “adhori mamta” or “bheegi January” likhi hain sohni digest mein jo k alhamdulillah publish b ho gai.ab main novel likhna chahti hu.kya ap mujhe guide kr skti hain.

        1. گوہر شہوار

          انیلا نواز: میں نے آپ کی دونوں کہانیاں پڑھی ہیں۔ آپ اچھا لکھتی ہیں، الفاظ بھی اچھے ہیں مگر ایک جلدی سی نظر آتی ہے۔ آپ کی کہانی کا مجموعی تاثر غیر واضح ہوتا ہے۔ یہ میری ذاتی رائے ہے جس میں غلطی کا شائبہ ہوسکتا ہے۔ ویسے میں بھی آپ کی طرح ابھی اس میدان میں طفل مکتب ہی ہوں کسی کو سکھانے کی ابھی اوقات نہیں ہے۔

          1. actually adhori mamta meri real story hai main us waqt shaded sadme ki halat mein thi.apna dukh share krny k liye qalam utha liya is liye shayd kuch ghaltian hui hain.ap ne meri stories parhi or mujhe kami btayi us k liye bht shukriya.

  13. گوہر شہوار

    So nice of you

  14. Kuch na mumakamal sa tha end se.
    Likha bohat shandar hy (y)

    1. گوہر شہوار

      Hanna Arham, i am just curious, aap ko ending se kya samaj aya?

      1. Respected writer .. muje to yehi samjh aya k mehak hi Abeer hy par Abeer hospital se taimour k Ghar kesy ponchi…means unki family kaha gai. or sab se important​ bat k khasif ko sach pata chala j ni.asy laga k ak side ki story thi end se…
        Likha bohat acha hy…ilfaz bohat khobsurt hain

  15. Beautifully penned story. Loved your craft. Wish you good luck for future endeavors. Keep writing please.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Sohni Digest © 2014 - 2017 | Privacy Policy